انسان،  انسان کو ڈستا ہے ۔۔۔ صدیقہ سحر

                                           

     ؎   مقید کردیا سانپوں کو یہ کہہ کرسپیروں نے 

           یہ انسانوں کو انسانوں سے ڈسوانے کا موسم ہے

 اللہ تعالیٰ نے انسان کو اعلیٰ درجے پر فائزاس لئے کیا اور دوسری مخلوقات پر شرف و برتری اس لئے بخشی،  تاکہ وہ ایک دوسرے کی دلجوئی کریں،  آپس میں اچھے روابط قائم کریں اور زندگی کا سفر خوشگوار انداز سے گذاریں۔  بقول ارسطو انسان ایک سیاسی اور معاشرتی حیوان ہے،  یعنی یہ مل جل کر رہنے پرمجبور ہیں،  معاشرے سے ہٹ کر اکیلے زندگی بسر نہیں کر سکتا۔  زندگی کا یہی تقاضا ہے کہ معاشرتی زندگی کو آگے بڑھانے اور ضروریات کی تکمیل کے لئے،  انسان اکٹھا رہے۔

                                                ایک انگریز مصنف کا کہنا ہے کہ:

  ”Whosoever is delighted in solitude is either a wild beast or a god.”

فارسی زبان کا شاعر(سعدی)  کے مطابق:

                                                ؎   بنی آدم اعضائے یکدیگرند…………کہ در آفرینش زیک گوہرند

                                                  چو عضوی بہ درد آورد روزگار…………دگر عضوھا را نماند قرار

                                                  توکز محنت ِدیگران بی غمی…………نشاید کہ نامت نھند آدمی

 دیکھا جائے تو اللہ تعالیٰ نے انسانوں کو ایک دوسرے کے لئے معاون و مددگار خلق کیا ہے تاکہ وہ ایک دوسرے کے دکھ سکھ میں کام آئیں اور آپس میں بھائی چارہ قائم کریں۔  مگر آج کے دور میں اگر ہم دیکھیں تو انسان نے اخلاقی اقدار کو بالکل فراموش کر دیا ہے۔  چہ جائیکہ وہ انسانیت کے اصولوں کو پامال کر رہا ہے،  بلکہ انسانیت کے معیار سے بھی نیچے گر چکا ہے۔  آج کا انسان مکمل طور پر زرپرست بن گیا ہے،  اسی لئے یہ زرپرستی کو انسانیت پر فوقیت دیتا ہے۔  یہ اس حد تک موقع پرست بن چکا ہے کہ اپنے مفادات کی خاطر کسی بھی حد تک گر سکتا ہے۔  اس نے کینہ و حسد،  بغض و عداوت اور خودغرضی و نفسانفسیت،  الغرض ہر اخلاقی برائی کو اختیار کر رکھا ہے۔  نفرت کی آگ نے ان کے سینوں میں اتنی شدت اختیار کرلی ہے کہ کوئی ایک دوسرے کو برداشت ہی نہیں کر سکتا۔

بقول فراز:

                                                ؎   میرا اس شہر عداوت میں بسیرا ہے جہاں

                                                   لوگ سجدوں میں بھی لوگوں کا برا سوچتے ہیں

                                                آج کے دور میں کوئی بھی شخص دوسرے کا خیرخواہ نہیں ہے۔  نفسا نفسی اور خودغرضی کا یہ عالم ہے کہ ایک بھائی دوسرے بھائی کا دشمن بن کر بے حس بن چکا ہے۔

 کسی نے کیا خوب کہا ہے کہ:  ”پتھر کا زمانہ تو گذر گیا ہے،  مگر اب لوگ پتھر کے بن گئے ہیں۔“  یعنی جس طرح پتھر بے جان ہے اسی طرح آج کا انسان اتنا بے حس بن چکا ہے کہ اس کی مثال بے جان پتھر کی مانند دی گئی ہے۔

                                                ؎   لوگ احساس کی روندی ہوئی گلیوں میں

                                                   پھینک دیتے ہیں تعلق کو پرانا کرکے

 اب جبکہ ہر طرف منافقت اور نفرت کی فضا پھیلی ہے اور انسان صرف اور صرف اپنا مطلب نکالنے کی حد تک پابندی و مستعدی دکھاتا ہے تو ایسی صورتحال میں کوئی اگر اچھا سوچ اور مثبت فکر بھی رکھے،  تو بھلا کیسے؟!؟!

مختصراً

                                                  جب ظلم کے ایوانوں میں انسانیت ہار جاتی ہے

                                                   تو فرش کیا عرش سے بھی آہ و بکا کی ندا آتی ہے

صدیقہ سحر

صدیقہ سحر درس و تدریس کے شعبے سے وابستہ ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published.