ای خُدا جان تا بیا ۔۔۔ اکبر علی

اللہ میاں تھلے آ

ای خُدا جان تا بیا!!!

گفتم امروز قد تُو دردِ دل کنوم

دِل مہ پُورہ، یک کَمَک بِل بِل کنوم

گب خُو بوگوم رُست، چرہ کِل کِل کنوم

بیخی دُوری، دہ مِی نزدیکا بیا

ائ خدا جان تا بیا!!!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یک کَرَت گر میتنی خُو سیل کنو

خُوب و بد رہ خود تُو یک غلبیل کنو

زنگ درہ ہر یک مشین تُو، تیل کنو

شاؤ اگر نہ می تَنی ، صوبا بیا

ائ خدا جان تا بیا!!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وقتی بَینِ سنگ کِرِم رہ نان مِیدی

ہر سگ ِگُشنا رہ استغان میدی

بلدے ہر بندے خُو امتحان مِیدی

گوشِ دسترخوانِ غریبا بیا

ائ خدا جان تا بیا!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نان نیہ، دوا نیہ، خانہ نیہ

مُرغ آوارہ رہ یک لانہ نیہ

نشنہ گب تِید ، اُوتہ زمانہ نیہ

بلدے سیل کدونِ تماشا بیا

ائ خدا جان تا بیا!!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تُو کہ قد یک پُف خُو دنیا جور کدی

روز رہ روشو، شاو رہ سیا جور کدی

آر رقم کوہ ہا و دریا جور کدی

باز یک پُف کُو، دَمی روزا بیا

ائ خدا جان تا بیا!!!

۔۔۔۔۔۔۔

اینجی کہ دیوال مہ کوربَلجی مُونہ

بَینِ آتش مہ رہ تَو بَلجی مُونہ

آؤِ چِیلِیم مہ رہ اوچِلجی مُونہ

آؤ زِ گردو تیر شدہ، یک را بیا

ائ خدا جان تا بیا!!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سیل کُو دنیا رہ خدا جان! آؤ بُرد

سیلِ غم اَم روز بُرد، اَم شاو بُرد

وختی کومک آر مَجَل تُور خاو بُرد

بال شُو از خاوِ لیگڈمندہ بیا

ائی خدا جان تا بیا !!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کارد و ٹونٹی سر مہ بَل کد، نامَدی

غمِ دنیا مہ رہ شل کد، نامَدی

چِیم مہ بلدے تُو مَتَل کد، نامَدی

کم خُو دہ کومکِ پئ مندا بیا

ائ خدا جان تا بیا!!!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بیا دہ نام خُو سیل کُو کاروبار رہ

آخوندای مِثلِ اژدرمار رہ

بندگانِ سادہ و اوگار رہ

سر مہ جور کد روز عاشورا بیا

ائی خدا جان تا بیا!!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خود تُو، خود خُو از تمام عادل مُوگی

خود خُو حق، دِگرو رہ پَگ باطل مُوگی

ہر کہ حق خاست، اُو رہ ناقابل موگی

بیدی حق مہ دہ امزی دنیا، بیا

ائ خدا جان تا بیا!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وخت شی بایہ، ما از تُو پُرسان مونوم

قد تُو ما حسابِ ہر دَوران مونوم

خانے ظالم رہ لیگَڈ ویران مونوم

خات کدی زاری کہ از قار تا بیا

ائ خُدا جان تا بیا!!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وختی بَل زاری مہ تُو خندہ مونی

پیشِ خود مہ، مہ رہ شرمندہ مونی

از زِیمیں آسمو، مہ رہ کندہ مونی

آلی گر مصروفی، قد راسا بیا

ائی خدا جان تا بیا!!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چرہ خوشی، پیش تُو ما زاری کنوم؟

دین و مذّب تُو نگاداری کنوم

بلدے تسبیح تو شَو بیداری کنوم

کم کنو دہ سَر مہ تو جفا، بیا

ائ خدا جان تا بیا!!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ائ خدا امروز اگہ خدا شدے

یا کلو کٹہ و کبریا شدے

ہیچ کس ام ندرے، تک و تانا شدے

آلی آر دوئی مو شنی آشنا بیا

ائی خدا جان تا بیا!!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فِکرِ کم مہ، اوتر یک زمان مَیَہ

نام تو فقط زیبِ یک داستان مَیَہ

اُو زمان، بس نَو رقم انسان مَیَہ

باز اگہ خاستی، دہ نَو ناما بیا

ائ خدا جان تا بیا!!!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ما شنُوم نادر تو، بل دل خُو نگر

گبِ اکبر رہ تُو قابل خُو نگر

شُنی کُشتہ، مہ رہ قاتل خُو نَگر

تا بکئی رہ استے بے پروا؟ بیا

ائ خدا جان تا بیا!!!

اکبر علی

اکبر علی

مضمون نگار اظہار کے مدیراعلیٰ ہیں۔ ڈنمارک کے شہر کوپن ہیگن میں مقیم ہیں اور سماجی امور میں دلچسپی رکھتے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *