اوسین الی ایسوفی ۔۔۔ محمد یونس

کتابِ “فرہنگِ ادبیات ھزارہ گی: ضرب المثال و محاورات” دہ فروری 2010 دہ چھاپ رسید۔ بلے کتاب دہ تای ٹائٹل شی قد سفید رنگ نامِ حسین علی یوسفی واضح نوشتہ استہ۔ اولنہ نام ازونا قد ح ۔ س۔ ی۔ ن یعنی حسین نوشتہ استہ۔ دومنہ نام ازونا قد ع- ل- ی یعنی علی نوشتہ استہ و عین اموتر سیومنہ نام شی قد ی۔ و۔ س۔ ف۔ ی نوشتہ استہ۔ مکمل نام ازونا حسین علی یوسفی استہ۔ ای نام رہ یگو دیگہ کس بلے کتاب ازونا نوشتہ نکدہ بود بلکہ اونا خودون شی قد قلم از خود خو نوشتہ کدہ بود۔

یوسفی وقتیکہ حیات بود تمام نام ازونا رہ قد درست ہجہ (حرف) یعنی حسین علی یوسفی نوشتہ و یاد موکد۔ آلی غئیدیکہ اونا از دنیا رفتہ بعض ‘آدمائی فامیدہ’ نام ازونا رہ قد غلط ہجہ یعنی اوسین الی ایسوفی نوشتہ مونہ بخاطریکہ دہ مطابقِ فکرِ ازونا حسین علی یوسفی آزرہ گی یاد ندشت و اونا نام خو ام نموفامید کہ چیتور نوشتہ کنہ ازو خاطر آلی چند ہوشیار نفرا جم شودہ نامِ حسین علی یوسفی رہ درست کدہ رئیہ۔

اگر یوسفی زندہ موبود آیا اونا ای ‘عاقلا’ رہ اجازہ میدد کہ ہجے نام ازونا رہ تغیر بیدیہ — یقینن نمیدد بخاطریکہ اونا نام خو دہ واضح الفاظ دہ بلے کتاب خو دہ مکمل احترام حسین علی یوسفی نوشتہ کدہ بود نہ کہ اوسین الی ایسوفی۔

بعد از نامِ حسین علی یوسفی — بوبخشین اوسین الی ایسوفی ، از بروری آوال امدہ رئیہ کہ ای ‘دانشمندا’ دیست خو بلے کتاب و نوشتای یوسفی ام دراز کدہ رئیہ و دہ ای بابت گوفتہ موشنہ کہ اونا انشاالله دہ زودی و از حمایتِ ایچ ڈی پی اُو تمام الفاظ و حروف مثلن ح، ص، ض، ط، ظ، ع، ے یوسفی کہ دہ کتابِ ضرب المثل آزرہ گی خو نوشتہ کدہ بود غائب مونہ چراکہ یوسفی نموفامید کہ آزرہ گی چیتور نوشتہ موشنہ یا کودم حرف باید دہ آزرہ گی باشہ۔

آدم حیران موشنہ کہ دہ گردوُور آدم چیز کارا شودہ رئیہ۔ مثلن از نام یوسفی متاسفانہ او آدما شخصی حمایت و شہرت گرفتہ رئیہ کہ اونا قد نوشتے یوسفی اید اتفاق ندرہ۔ ای رقم آدما روزانہ یوسفی یوسفی مونہ۔ کلان کلان پوسٹرای شی چھاپ مونہ۔ فنکشنز میگرہ۔ یوسفی رہ خلاصہ اونا یک قسم رہبرِ آزرہ گی فکر مونہ مگر آزرہ گی نوشتای یوسفی رہ احترام نمونہ۔ از تمام زیاد حیران کن و قابلِ تشویش گپ ای استہ کہ ایچ ڈی پی و حمایتیای شی او فرد یا گروہ رہ حمایت مونہ کہ اونا ضدِ آزرہ گی نوشتے یوسفی استہ — اصولن باید نباشہ مگر استہ۔ خدا خبر چرا استہ — یقینن جای افسوس استہ۔

نوٹ: امیدوارم کہ یگو مرہ دو دشنام نمونہ۔ البتہ اگر یگو بلے آزرہ گی نوشتای یوسفی اعتراض درہ اونا بیشک کمنٹ کنہ۔ ما خود مہ شخصن قد آزرہ گی نوشتای یوسفی مکمل اتفاق دروم و دہ ای بابت یوسفی رہ احترام مونوم و کسائیکہ ہمیشہ یوسفی یوسفی مونہ اونا باید کتابِ یوسفی رہ بیخانہ۔

a

محمد یونس

محمد یونس

یونس دہ کاڈیف، يوکے زندگی مونہ و دہ کالج انگلیسی درس میدیہ۔ اونا آزرگی زبان رہ خوش درہ و بیشتر دہ آزرگی زبان نوشتہ مونہ۔ Please click below to read more stories in Hazaragi language  www.myounas.com

7 thoughts on “اوسین الی ایسوفی ۔۔۔ محمد یونس

  • 03/02/2020 at 11:38 am
    Permalink

    دہ بارے زیبونا یگ تورہ کی کولیدہ شودہ او ای یہ لوزای یگ زیبو دہ دیگہ زیبو کی را پیدا مونہ، آوازا، رنگ اونگہ قد مانای شی گینے خو اللی نمومنہ۔ مسلن لوزای فارسی کی قد زیبونی قومی آزرہ گڈ خوردہ پگ شی نہ فقد آوازای شی ادل بدل شودہ بلکی مانای شی ام فرق کدہ۔ امی رقم لوزای اربی یا فارسی کی دہ زیبونی اوردو را پیدا کدہ، رنگ اونگہ و مانای شی بیخی بدل شودہ۔ مسلن لوزی افراط و تفریط اربی کی قد زیبونی اوردو گڈ خوردہ یگ لوز، افراتفری جور شودہ و مانای شی ام از آردو لوزی اربی فرق کدہ۔
    اگہ مو کاری ادل بدل شودو رہ از قستی دیل توخ کنی مینگرنی کی دہ ای دونیا آرخیل ادل بدل موشہ و اید خیل ام دہ یگ آل نمومنہ۔ اگہ مو کونڈے دیرختی تود رہ دیست نزدہ در شی دو تار سخت کدہ او رہ دمبورہ جور نمیتنی بلکی او رہ ترشیدہ، رنگ اونگے شی بدل کدہ ازوختہ دمبورہ جور نی کی آواز بیدیہ۔ امی رقم مو آیینی کولولہ رہ دہ آل شی ایشتہ از شی کار گیریفتہ نمیتنی تا کی اورہ میدہ میدہ کدہ رقم رقم چیزا جور نکنی۔ یگ اینسان ام از پیداشود خو گیریفتہ تا از دونیا رفتون شی رنگ اونگے شی بدل شودہ مورہ۔ زیبونایی کی دہ ای دونیا گوفتہ موشہ ام امی رقم استہ۔ مسلن از 35 خنواری دہ ای سری روز 7105 زیبونا ازی خاتیر دہ ووجود امدہ۔ ای زیبونا ازی حاتیر یگ از دیگے خو جودا شودہ کی رقم روقوی آوازا۔ لوزا، ساختی جوملا، رقم روقومی گوفتار قد مانا و غیرے شی یگ از دیگے خو فرق کدہ و آر کودم جودا یگ زیبو جور شودہ۔
    لوزای یگ زیبو کی قد لوزای زیبونی دیگہ گڈ موخرہ رنگ اونگے شی بدل موشہ۔ مسلن لوزی لشکری فارسی دہ زیبونی اربی عسکر جور شودہ ۔ دہ زیبونی اربی پاکیستان رہ باکستان، کراچی رہ کراتشی۔ چین رہ صین، جاپان رہ یابان و ڈیموکریٹ رہ دیموقرات موگیہ۔ دہ زیبون فارسی کاکڑ رہ کاکر، جرمنی رہ آلمان، آسٹریا رہ اتریش، ملیشیا رہ مالیزی، جاپان رہ ژاپن و ریڈیو رہ رادیو موگیہ۔ دہ زیبونی سیندی میلہ رہ میلو و مزہ رہ مزو موگیہ۔ دہ زیبونی پشتو قوم رہ قام ، قصہ رہ کیسہ، عبدالعلی رہ اودول الی و خواھر رہ خور موگہ۔ دہ زیبونی اردو دو لوزی اربی افراط و تفریط یگ لوز افراتفری جور شودہ۔ و مانای شی ام از آردو لوزی اربی فرق کدہ۔
    از حاتیری کی رقم رقم زیبونا نیزامی سوتی شی یگ از دیگے خو فرق درہ امزو گوییندای يگ زيبو کی لوزای دیگہ زیبو رہ از خو مونہ، او لوزا رہ رنگ اونگے شی بدل مونہ۔ بیسم دہ نیمشتہ ام لوزا رہ امو رقم نیمیشہ مونہ کی رقم روقوم شی گینے شی اللی نمومنہ۔
    بلدے ازی کی لوزا از یگ زیبو دہ دیگہ زیبو رفتہ آوازای شی بدل موشہ، قدرتو یونس ای رقم فیکر مونہ کی حسین علی دہ زیبونی اربی مانا درہ اوسین الی کی شود او فقد اوروفی یگجای شودہ یہ کی مانہ ندرہ۔ لاکین اونا تا تیس رہ ازی تورہ خبردرہ نییہ امو رقم کی حسین علی بلدے اربا مانا درہ، اوسین الی بلدے اولوسی آزرہ مانا درہ۔ دہ بارے حسین علی و اوسین لی یگ نقلی راستی ای یہ کی: یگ پولوس از سنگی ماشے جاغوری دہ دومجوی پاتو رفتد۔ دہ ای دوران دہ آغیل میرزا اوسین رہ مینگرنہ کی زبیتہ آلاف قیلہ مونہ۔ پولوس از شی پورسان مونہ کی خانے حسین علی دہ کوجا یہ ؟
    دہ جواب شی میرزا اوسین موگہ کی ما حسین علی رہ اید نمینخشوم۔ پولوس پیشی موللای آغیل مورہ از شی پورسان مونہ و موللا خانے حسین علی رہ نیشو میدیہ۔ دہ اینجی پولوس دہ سری میرزا اوسین قار شی میہ و از پیشی حسین علی کی پس میہ تورو دہ جانی میرزا اوسین میہ۔ او رہ دوکری کدہ موگیہ کی تو موگوفتی کی ما حسین علی رہ نمینخشوم، او خانے شی نیزدیگی خانے خود تو یہ، پدر صفدر حسین علی نییہ؟
    میرزا حسین پولوس رہ دوکری کدہ موگہ آتے صفدر نام شی کئی حسین علی یہ؟ نام ازو اوسین لی یہ ۔ تو بے اقل اوسین لی رہ حسین علی موگی۔
    ازی نقل ای فامیدہ موشہ کی اوسین لی بلدے کٹہ کلونای آزرہ مانا درہ لاکین حسین علی مانا ندرہ ۔ ای دیگہ تورہ یہ کی آزرگونی سواد تو موشہ، رقمی تورہ گوفتونی پیشناگون خو رہ تخمرہ مونہ۔
    کٹہ کلونا یا آتہ و آبے از مو کی حسین علی رہ اوسین لی، صادق علی رہ سد قیلی، حسن علی رہ آسن لی و رمضان رہ ربزان گوفتہ بچکیچای خو نامای شی میگرہ، اوچد آو مونہ و کس ام بدبورلہ ننہ۔ لاکین غیدی کی مو دہ دیگہ زیبونا سواد پیدا مونی، نامای مو دہ شان مو مسقرہ میہ و نیمیشتہ کدون شی بلدے مو مولمود و بے مانا جور موشہ۔ اگہ از نزری ایلمی زیبو شیناسی توخ کنی لوزای یگ زیبو دہ دیگہ زیبو رنگ اونگے شی بدل شودو قودرتی استہ و ای یگو رقم جینجالی ایلمی ندرہ۔ لاکین دہ ای مامیلہ اسل مسلے از مو نفسیاتی یا روانی یہ۔
    اگہ دہ بارے رسم خد مو فارمولے قدر تو یونس رہ قبول کنی بستہ لوزای زیبونی آزرکی مولمود و بے مانا جور موشہ۔ دہ زیبونی آزرگی می شود فارسی موشہ جور شودہ۔ از ایسابی یونس می شود مانا درہ موشہ مانا ندرہ۔ می تواند مانا درہ میتنہ مانا ندرہ، خروس مانا درہ، خورو مانا ندرہ۔ گوسفند مانا درہ، گوسپو مانا ندرہ۔ ابر مانا درہ، آوور مانا ندرہ۔ ھزارہ مانا درہ آزرہ مانا ندرہ۔
    قدر تو یونس کیبلائی آزرگی رہ ای رقم مشورہ میدیہ: مشورہ ای استہ کہ ای تمام حرفا دہ نوشتے آزرہ گی زبان باید باشہ۔ البتہ گوفتوی شی کم سافٹ شونہ۔ مثلِ کہ دہ زبان انگلیسی سائلنٹ لیٹرز و ڈراپ سیلیبلز استہ۔ حلوہ رہ قد /ح/ نوشتہ مونی، البتہ خاندوی شی الوہ میخانی۔ عین اموتر علی رہ قد /ع/ نوشتہ مونی، خاندوی شی اَلی میخانی۔
    از فار مولے قدر تو یونس مو ای رہ ام یاد میگری کی می شود نیمشتہ کنی موشہ بیخانی۔ می تواند نیمیشتہ کنی میتنہ بیخانی۔ مادر نیمیشتہ کنی آبئی بیخانی۔
    قدر تو یونس نیمیشتہ مونہ:
    افسوس مہ دہ ازی مایہ کہ برارای بروری حسین علی یوسفی رہ یک قسم بابای آزرہ گی فکر مونہ مگہ ما یقین دروم کہ یک ازونا ام کتاب یوسفی رہ کہ دہ نام ہزارہ گی ضرب المثال و محاورات استہ خاندہ باشہ چراکہ یوسفی او تمام حروفا رہ دہ کتاب خو استعمال کدہ کہ اینا بور کدہ۔
    سیمبلی آوازای اربی رہ کی دوستای کیبلاغی آزرگی دہ رسم خدی آزرگی اووردہ، نزری دیگہ چیگگا ام دہ بارے زیبونی آزرکی قد کیبلاغی آزرگی سر موخرہ۔ اوستادی دانیشگایی کابول شاہ علی اکبر شاریستانی دہ کیتابی قاموس لہجہ دری ھزارگی خو سیمبلی فونیمیکی کانسونینٹی آزرگی، سیمبلای اربی رہ نووردہ کی آوازای شی دہ ای زیبو نییہ۔ امی رقم عوض علی نبی زادہ، پروفیسر شرافت عباس، ڈاکتر اکبر شاریستانی قد طارق مالیستانی ام دہ کیتابای خو آوازای فونیمیک کانسونینٹ آزرگی رہ اووردہ کی در شی سیمبلی ث، ح، ذ، ص، ض، ط، ظ، ع نییہ، ای سیمبلا بلدے ازو آوازای اربی کی جور شودہ آر کودم شی از خود خو جودا جودا مخرج درہ لاکین زیبونی آزرگی ای مخرجا رہ از سر اید ندرہ۔ اگہ دہ زیبونی آزرگی ای مخرجا نییہ، خو بچی ای سیمبلا رہ بلدے دردی سر زیاد کدو بیری؟ دہ انگریزی اگہ ظالم رہ Zalim زمین رہ Zameen ضامن رہ Zaminتمام شی قد z نیمیشتہ موشہ دہ ای بارہ بچی کس لب پس نمونہ؟ دہ رسم خدی آزرگی بلدے ازی آوازا از ز کار گیریفتہ شونہ چیز فرق مونہ، آسمو دہ زیمی میہ یا آسمو دہ زیمی تا موشہ؟ دیگہ ای کی رسم خدی فارسی و انگریزی قد سیمبلای سا‏یلینٹ و فالتوی خو ناقیس ترین رسم خدا یہ مو بیسم بچی وا رہ بلدے خو سر مشق جور کنی؟

    Reply
  • 03/02/2020 at 2:11 pm
    Permalink
    Names have always been changed through out the history from their origin to other languages by the people, religion or any other medium. People use the names according to their vocals present in their alphabetical system.
    I don’t think so there may be any issue with Hazargri alphabets which is recently introduced to the people by Keblagh-e- Azrgi.
    You may observe the following names and their alternatives in other languages.

    Names Languages

    Musa (موسی) Arabic, Persian
    Moses Biblical
    Mouses Greek
    Mozes, moos Dutch
    Mose German
    Moisey Russian
    Moussa Western Africa

    Maryam (مریم) Arabic, Persian
    Marika Greek
    Maryamu Hausa
    Malia, mele Hawaiian
    Maureen, moyra Irish
    Marianne, mia, mie Norwegian
    My Swedish
    Meryem Turkish

    Issa (عیسی) Arabic Persian
    Josu Basque
    Jesus Biblical
    Lesous Greek
    Losue Latin
    Josh English
    Giosue Italian
    Josue French

    Ibrahim (ابراھیم) Arabic Persian
    Ibro Bosnian
    Abraam Greek
    Ibragim Chechen
    Abraham, braam, bram Dutch
    Abraham, abe, bram English
    Aapo Finish
    Avi Hebrew
    Abramo Italian

    Dawood (داود) Arabic Persian
    Davit Armenian
    Davud Azarbaijani
    Dauid Greek
    Daveth Cournish
    Taveet, taave Estonian
    Taavi Finish
    Biabhi Irish
    Davide Italian
    Dave, davey, david English
    Dudel Yiddish

    Jibril( جبریل) Arabic
    Gabriel Greek
    Gavrail,gavril Bulgharian
    Gabrijiel Croatian
    Gabriel, gabby, gabe English
    Gablieli Italian
    Gabriel, gavril, gavi Romanoian
    Gavriil Russian

    Ahmad ( احمد) Arabic, Persian
    Akhmad Chechen
    Ahmadu Hausa
    Akhmad Ingush, Russian
    Axmed Somali

    Hasan (حسن) Arabic, Persian
    Khasan Bashkir, Chechen, Indush, Russian
    Xasan Somali

    Habib (حبیب) Arabic, Persian
    Khabib Ingush, Russian

    Reply
  • 03/02/2020 at 3:09 pm
    Permalink

    قرون وسطی میں جب فارسی زبان کیلئے عربی رسم الخط کو اپنایا گیا تھا تو اس دور میں سائنسی نقطہ نظر کے فقدان کے باعث فارسی زبان کے عالم اس زبان کی خصوصیات،مصمتوں اور مصوتوں کو ملحوظ رکھے بغیر عربی رسم الخط کی تقلید کی تھی۔ دوسری بات یہ کہ اس بنیاد پرستانہ دور میں فارس کے لوگ چونکہ عربی کو جنت کی زبان اور مقدس سمجھتے تھے اس لئے اس کے الفاظ کو بعینیہ اسی طرح لکھنے لگےتھے جو اس کی کتابت میں مروج ہوا کرتے تھے۔ حالانکہ فارسی زبان میں حرف ذ، ص،ض،ط، ظ کی آوازیں سرے سے موجود ہی نہیں ہیں۔ لیکن پھر بھی فارسی رسم الخط میں ان حروف سے بلا وجہ استفادہ کرنے کا چلن عام ہوا۔
    بعد کے ادوار میں اردو اور دیگر زبانوں میں جب فارسی رسم الخط سے استفادہ کیا گیا تو اندھادھند تقلید کرنے کا سلسلہ جاری رہا۔ رفتہ رفتہ لوگوں کیلئے یہ تقلیدی عمل میکانیکی صورت اختیار کر گیا۔ اب صورت یہ ہے کہ پڑھے لکھے لوگ اس دقیانوسی عمل کے عادی ہوچکے ہیں چنانچہ وہ تبدیلی کے ہر قدم کو شک کی نظر سے دیکھ کر اس کی مخالفت کو اپنے لئے طرہ امتیاز سمجھتے ہیں۔
    لیکن عربوں کا معاملہ اس کے بر عکس ہے۔ ان کی زبان کو چونکہ مذہب کی پشت پناہی حاصل ہے اس لئے انہیں اس بات کا ڈر ہی نہیں ہے کہ وہ دوسری زبانوں کے الفاظ میں تبدیلی لاکر تنقید کا سامنا کریں گے۔ عرب اپنی زبان کی صوتی خصوصیت کو مد نظر رکھ کر دوسری زبانوں کے الفاظ میں آسانی سے تبدیلی لاتے ہیں اور ان پر اعتراض کرنے والا بھی کوئی نہیں ہوتا مثال کے طور پر انہوں نے لاتینی ناموں کو اس طرح تبدیلی لائی ہے۔
    لاتین: عربی:
    پلیٹون افلاطون
    سوکریٹ سقراط
    سیٹن شیطان
    جیکب یعقوب
    جوزف یوسف
    سیمسن شمعون
    ڈیلائلہ دلیلہ
    مختلف زبانوں میں ناموں یا الفاظ کی تبدیلی کو ماہرین لسانیات ایک قدرتی عمل سمجھتے ہیں او اس پر اعتراض نہیں کرتے۔ بلکہ وہ اس بات پر متفق ہیں کہ ہر ایک زبان کی خاصیت کو تحفظ دینا چاہئے

    Reply
  • 03/02/2020 at 9:25 pm
    Permalink

    قدرتو یونس!
    آزرگی او زیبو استہ کی بونیاد شی تورکی موغولی یہ لاکین آزرہ دہ دورونی دور دیرازی تاریخی کی قد فارسا و تاجیکو زیندگی تیر کدہ۔ لوزائی فارسی رہ ام قد زیبون خو گڈ کدہ۔ ازخاتیری کی لوزائی یگ زیبو غیدی دہ دیگہ زیبو شامیل موشہ رقم روقوم خو از دیست میدیہ لوزائی فارسی ام دہ آزرگی تمام شی رنگ اونگے خو از دیست ددہ۔ امی رقم لوزا و نامای اربی ام دہ زیبونی آزرگی دہ رقمی اسل خو نمندہ مسلن:
    نامای اربی: آزرگی:
    علی الی
    حسین اوسین
    حسن آسن یا اسن
    عباس اباس
    جواد جود
    یوسف ایسوف
    یعقوب یاقوب
    عبدل ابدول
    عوض ایوز
    ظاہر زائیر
    رحیمہ رخیمہ
    روح اللہ روخوللا
    مریم میرم
    عیسی ایسا
    حسنیہ اوسنیا
    ہادی آدی
    امی رقم لوزی ہزارہ دہ آزرہ بدل شودہ یا می شود دہ موشہ بدل شودہ۔ یا ای رہ بوگیم کی تمام لوزایی فارسی دہ آزرگی رنگ اونگے شی بدل شودہ۔ ای مانای شی ای نییہ کی مو زیبونی فارسی رہ مسقرہ جور کدے۔
    نامای کی دہ بوللو نیمیشتہ کدووم، بستہ آزرہ نامای آتئی گون خو قد آل اولاد و نیزدیکنای خو رہ شیجیر امی رقم گیریفتہ امدہ۔ یا شومو بورید از آتے ایسوفی پورسان کید نامی بچے خو رہ اوسین الی ایسوفی اگہ نگیریفت شومو ما رہ در بیدید۔ اگہ تورای از شومو رہ راس فیکر کنی بستہ زیبون از مو توہین آمیز،غلد و بے مانا بور موشہ۔ دہ شان از شومو مردوم از مو کی نسل دہ نسل نامای یگدیگے خو دہ رقمی آزرگی شی گیریفتہ امدہ، شیجیر یگدیگے خو رہ مسقرہ و توہین کدہ؟ یا مو کی دہ جای “ہزارہ” خود خو “آزرہ”یا “ازرہ” گوفتہ امدے، خودون خو رہ توہین کدے؟؟؟
    اگہ جواب شیم نہ استہ، ازی پاس تورای خو سای کدہ بوگید۔

    Reply
  • 04/02/2020 at 7:37 am
    Permalink

    جب شہید حسین علی یوسفی حیات تھے تو ان کی کتاب کے اردو ترجمے میں، میں نے خود بھی حصہ لیا تھا۔ اور ہزارگی زبان کے حوالے سے ہم دونوں میں بعض باتوں پر اختلاف تھا۔ جب ہم نے ہزارگی رسالہ منجی کا اجرا کیا تو رسم خط کی تبدیلی کے ساتھ سابقہ اسپیلون آزرگی اور موجودہ کیبلاغ آزرگی نے بہ امر مجبوری یہ فیصلہ کیا کہ ( ہمارے پڑھے لکھے افراد کی ذہنیت اس طرح ہے کہ وہ عربی ناموں کو ہزارگی میں لکھنے کے متحمل نہیں ہوسکتے اس لئے) عربی ناموں کو اس طرح لکھا جائے جو عربی ہی میں لکھے جاتے ہیں۔ جب شہید یوسفی کی کتاب ان کی شہادت کے بعد چھپ رہی تھی تو اس کیلئے کمیٹی بنائی گئی تھی۔ کمیٹی نے کتاب کے اس نام سے اختلاف کیا جو شہید یوسفی نے اپنی زندگی میں اپنی کتاب کیلئے تجویز کیا تھا۔ کمیٹی والوں نے کتاب کا نام ” فرھنگ ادبیات ہزارگی” رکھا تو ہزارگی اکیڈ می کو اس سے مکمل اختلاف تھا لیکن چونکہ کتاب کا چھپنا ضروری تھا اس لئے چھپ گئی۔
    جب سابقہ ہزارگی اکیڈمی اور موجودہ کیبلاغ آزرگی نے ہزارگی رسم الخط بنانے کا اہتمام کیا تو کیبلاغ کے دوستوں نے یہ فیصلہ کیا کہ ہزارگی کو اس کے صحت تلفظ اور مزاج کے مطابق لکھیں گے۔ جس طرح دوسری زبانوں میں یہ چلن عام ہے۔ اب اگر اختلافات سامنے آرہے ہیں تو انتہائی سطحی اور غیر علمی ہیں۔ کاش ہزارگی زبان کے حوالے سے سائنٹفک اور علمی باتیں سامنے آتیں۔ جو بد قسمتی سے ہمارے پڑھے لکھوں میں اس چیز کا فقدان نظر آتا ہے۔

    Reply
  • 04/02/2020 at 2:24 pm
    Permalink

    #جناب_یونس_کا_جواب

    جب شہید حسین علی یوسفی حیات تھے تو ان کی کتاب کے اردو ترجمے میں، میں نے خود بھی حصہ لیا تھا۔ اور ہزارگی زبان کے حوالے سے ہم دونوں میں بعض باتوں پر اختلاف تھا۔ جب ہم نے ہزارگی رسالہ منجی کا اجرا کیا تو رسم خط کی تبدیلی کے ساتھ سابقہ اسپیلون آزرگی اور موجودہ کیبلاغ آزرگی نے بہ امر مجبوری یہ فیصلہ کیا کہ ( ہمارے پڑھے لکھے افراد کی ذہنیت اس طرح ہے کہ وہ عربی ناموں کو ہزارگی میں لکھنے کے متحمل نہیں ہوسکتے اس لئے) عربی ناموں کو اسی طرح لکھا جائے جو عربی ہی میں لکھے جاتے ہیں۔ اگرچہ شہید یوسفی کو رسالہ منجی کے طرز تحریر سے اختلاف تھا لیکن اس کے با وجود انہوں نے اس رسالے کے دو شمارے کا خرچہ اس بنا پر برداشت کرلیا کہ ہزارگی زبان کا کارواں آگے بڑھ جائے۔ جب ہم نے ان سے ہزارگی زبان کے صوتی نظام کے بارے میں بات کی تو انہوں نے برملا اعتراف کیا کہ میں نے ہزارگی زبان کے ضرب الامثال اور محاورات کی تدوین ضرور کی ہے لیکن مجھے علم لسانیات کی صوتیات(فونولوجی) سے متعلق علم نہیں ہے۔
    جب شہید یوسفی کی کتاب ان کی شہادت کے بعد چھپ رہی تھی تو اس کیلئے کمیٹی بنائی گئی تھی۔ کمیٹی نے کتاب کے اس نام سے اختلاف کیا جو شہید یوسفی نے اپنی زندگی میں اپنی کتاب کیلئے تجویز کیا تھا۔ کمیٹی والوں نے کتاب کا نام ” فرھنگ ادبیات ہزارگی” رکھا تو ہزارگی اکیڈمی کو اس سے مکمل طور پر اختلاف تھا لیکن چونکہ ان کی شہادت کے بعد کتاب کا چھپنا ضروری ٹھہرا اس لئے چھپ گئی۔ کوئٹہ سرینا ہوٹل میں اس کتاب کی تقریب رونمائی کے دوران مرحوم عوث بخش صابر اور پروفیسر سیال کاکڑ، دونوں اہل علم شخصیات نے کتاب کے نام کو اس کے مسودے سے یکسر مختلف اور متصادم قرار دے دیا۔
    سابقہ ہزارگی اکیڈمی اور موجودہ کیبلاغ آزرگی نے ہزارگی رسم الخط بنانے کا اہتمام کیا تو کیبلاغ کے دوستوں نے یہ فیصلہ کیا کہ ہزارگی کو اس کے صحت تلفظ اور مزاج کے مطابق لکھیں گے۔ جس طرح دوسری زبانوں میں یہ چلن عام ہے۔ لیکن یونس صاحب کی طرف سی یہ اعتراض سامنے آیا ہے کہ شہید یوسفی نے اپنی کتاب پر اپنے نام کو درست لکھا ہے جبکہ بروری والوں کے اپسقالوں نے تحریف کرکے ان کے نام کو غلط لکھا ہے۔ انہوں نے اپنی ہر تحریر میں بروری والوں کا تذکرہ تحقیر آمیز لہجے میں کیا ہے۔
    اس حوالے سے پہلی بات یہ ہے کہ علم وآگہی کسی خاص علاقے کے لوگوں کی میراث نہیں ہوا کرتی اور بروری کے لوگ بھی اسی کرہ ارض کے باسی ہیں اور قدرت نےانہیں بھی دل و دماغ سے نوازا ہے، لہذا انہیں بھی یہ حق حاصل ہے کہ اپنی زبان کے بارے میں غور و فکر کریں۔اس ضمن میں وہ انفرادی کی بجائےاجتماعی طور پر کام کررہے ہیں۔
    دوسری بات یہ کہ ہزارہ قوم کی ترکی زبان میں فارسی اور عربی کے الفاظ شامل ہونے کے بعد ان میں صوتی تبدیلی واقع ہوئی ہے۔ لہذا یہ تبدیلی ایک سائنسی عمل ہے اس میں غلط اور صحیح کا پیمانہ بنانا ان لوگوں کا کام ہے جو علم لسانیات سے مکمل طور پر نا واقف ہوتے ہیں۔ راقم کو نہیں معلوم کہ یونس صاحب کو لفظ یوسف کیونکر صحیح اور ایسوف غلط لگ رہا ہے؟ حالانکہ لفظ یوسف لاتینی کے لفظ جوزف سے مشتق ہوا ہے۔ اب یونس صاحب اس سوال کا سائنسی جواب دے سکتے ہیں کہ جوزف درست ہے یا یوسف؟؟؟
    اگر یونس صاحب کے نظرئے کو درست تسلیم کیا جائے تو پھر ہزارگی میں شامل وہ تمام فارسی الفاظ کو ہم غلط استعمال کرتے چلے آرہے ہیں جن میں صوتی تبدیلی واقع ہوئی ہے۔ جیسے ہم نے می شود کو موشہ، می تواند کو میتنہ، خواہد کو خاد بنا دیا ہے۔ یونس صاحب کے فارمولے کے مطابق ہماری پوری زبان غلط ہے۔ کیونکہ اس میں پورے فارسی اور عربی الفاظ میں صوتی تبدیلی واقع ہوئی ہے۔
    اگر ایسا نہیں ہے تو پھر ہزارگی زبان کے صوتی نظام اور مزاج کے مطابق حسین کو اوسین، یوسف کو ایسوف، علی کو الی لکھنا درست ہے، کیونکہ ہمارے ابا و اجداد نسل در نسل ان الفاظ یا ناموں کو اسی طرح استعمال کرتے آئے ہیں۔

    Reply
  • 04/02/2020 at 3:08 pm
    Permalink

    #جناب_یونس_کا_جواب

    جب شہید حسین علی یوسفی حیات تھے تو ان کی کتاب کے اردو ترجمے میں، میں نے خود بھی حصہ لیا تھا۔ اور ہزارگی زبان کے حوالے سے ہم دونوں میں بعض باتوں پر اختلاف تھا۔ جب ہم نے ہزارگی رسالہ منجی کا اجرا کیا تو رسم خط کی تبدیلی کے ساتھ سابقہ اسپیلون آزرگی اور موجودہ کیبلاغ آزرگی نے بہ امر مجبوری یہ فیصلہ کیا کہ ( ہمارے پڑھے لکھے افراد کی ذہنیت اس طرح ہے کہ وہ عربی ناموں کو ہزارگی میں لکھنے کے متحمل نہیں ہوسکتے اس لئے) عربی ناموں کو اسی طرح لکھا جائے جو عربی ہی میں لکھے جاتے ہیں۔ اگرچہ شہید یوسفی کو رسالہ منجی کے طرز تحریر سے اختلاف تھا لیکن اس کے با وجود انہوں نے اس رسالے کے دو شمارے کا خرچہ اس بنا پر برداشت کرلیا کہ ہزارگی زبان کا کارواں آگے بڑھ جائے۔ جب ہم نے ان سے ہزارگی زبان کے صوتی نظام کے بارے میں بات کی تو انہوں نے برملا اعتراف کیا کہ میں نے ہزارگی زبان کے ضرب الامثال اور محاورات کی تدوین ضرور کی ہے لیکن مجھے علم لسانیات کی صوتیات(فونولوجی) سے متعلق علم نہیں ہے۔
    جب شہید یوسفی کی کتاب ان کی شہادت کے بعد چھپ رہی تھی تو اس کیلئے کمیٹی بنائی گئی تھی۔ کمیٹی نے کتاب کے اس نام سے اختلاف کیا جو شہید یوسفی نے اپنی زندگی میں اپنی کتاب کیلئے تجویز کیا تھا۔ کمیٹی والوں نے کتاب کا نام ” فرھنگ ادبیات ہزارگی” رکھا تو ہزارگی اکیڈمی کو اس سے مکمل طور پر اختلاف تھا لیکن چونکہ ان کی شہادت کے بعد کتاب کا چھپنا ضروری ٹھہرا اس لئے چھپ گئی۔ کوئٹہ سرینا ہوٹل میں اس کتاب کی تقریب رونمائی کے دوران مرحوم غوث بخش صابر اور پروفیسر سیال کاکڑ، دونوں اہل علم شخصیات نے کتاب کے نام کو اس کے مسودے سے یکسر مختلف اور متصادم قرار دے دیا۔
    سابقہ ہزارگی اکیڈمی اور موجودہ کیبلاغ آزرگی نے ہزارگی رسم الخط بنانے کا اہتمام کیا تو کیبلاغ کے دوستوں نے یہ فیصلہ کیا کہ ہزارگی کو اس کے صحت تلفظ اور مزاج کے مطابق لکھیں گے۔ جس طرح دوسری زبانوں میں یہ چلن عام ہے۔ لیکن یونس صاحب کی طرف سی یہ اعتراض سامنے آیا ہے کہ شہید یوسفی نے اپنی کتاب پر اپنے نام کو درست لکھا ہے جبکہ بروری والوں کے اپسقالوں نے تحریف کرکے ان کے نام کو غلط لکھا ہے۔ انہوں نے اپنی ہر تحریر میں بروری والوں کا تذکرہ تحقیر آمیز لہجے میں کیا ہے۔
    اس حوالے سے پہلی بات یہ ہے کہ علم وآگہی کسی خاص علاقے کے لوگوں کی میراث نہیں ہوا کرتی اور بروری کے لوگ بھی اسی کرہ ارض کے باسی ہیں اور قدرت نےانہیں بھی دل و دماغ سے نوازا ہے، لہذا انہیں بھی یہ حق حاصل ہے کہ اپنی زبان کے بارے میں غور و فکر کریں۔اس ضمن میں وہ انفرادی کی بجائےاجتماعی طور پر کام کررہے ہیں۔
    دوسری بات یہ کہ ہزارہ قوم کی ترکی زبان میں فارسی اور عربی کے الفاظ شامل ہونے کے بعد ان میں صوتی تبدیلی واقع ہوئی ہے۔ لہذا یہ تبدیلی ایک سائنسی عمل ہے اس میں غلط اور صحیح کا پیمانہ بنانا ان لوگوں کا کام ہے جو علم لسانیات سے مکمل طور پر نا واقف ہوتے ہیں۔ راقم کو نہیں معلوم کہ یونس صاحب کو لفظ یوسف کیونکر صحیح اور ایسوف غلط لگ رہا ہے؟ حالانکہ لفظ یوسف لاتینی کے لفظ جوزف سے مشتق ہوا ہے۔ اب یونس صاحب اس سوال کا سائنسی جواب دے سکتے ہیں کہ جوزف درست ہے یا یوسف؟؟؟
    اگر یونس صاحب کے نظرئے کو درست تسلیم کیا جائے تو پھر ہزارگی میں شامل وہ تمام فارسی الفاظ کو ہم غلط استعمال کرتے چلے آرہے ہیں جن میں صوتی تبدیلی واقع ہوئی ہے۔ جیسے ہم نے می شود کو موشہ، می تواند کو میتنہ، خواہد کو خاد بنا دیا ہے۔ یونس صاحب کے فارمولے کے مطابق ہماری پوری زبان غلط ہے۔ کیونکہ اس میں پورے فارسی اور عربی الفاظ میں صوتی تبدیلی واقع ہوئی ہے۔
    اگر ایسا نہیں ہے تو پھر ہزارگی زبان کے صوتی نظام اور مزاج کے مطابق حسین کو اوسین، یوسف کو ایسوف، علی کو الی لکھنا درست ہے کیونکہ ہمارے ابا و اجداد نسل در نسل ان الفاظ یا ناموں کو اسی طرح استعمال کرتے آئے ہیں۔

    Reply

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *