دہ روپیہ ۔۔۔ محمد یونس

دہ روپیہ

نوشتہ: محمد یونس

روزِ انتخابات بود۔ اسکول ہا، کالج ہا و دفتر ہا بند بود۔ عام تعطیل بود۔ دہ گلی زیاد بیربار بود۔ آوازای مردما و غُور غُورِ موٹر سائیکل ہا زیاد شودہ رئي بود مگر دہ خانے ازونا امن و امان بود۔ قرار قراری بود۔کس ام بلے صوبائ انتخابات گپ نمیزد بخاطریکہ اونا دہ انتخابات دلچسپی ندشت۔ تمام فامیل دہ پہلوی دسترخوان شیشتہ چای صوب رہ خوردہ رئي بود و ٹی وی ام توخ کدہ رئي بود۔ دہ ای دوران اچانک دروازے خانہ واز شود بچے ہمسائے ازونا کہ او زمان تقریبن دہ عمرای ہشت یا نو سالہ بود سلام گفتہ پیش اماد و زود گوفت “مہدی بیا، او نو بابے رضا دیوالِ اَولی خو پیش کدہ رئیہ۔”
چای رہ ایشتہ، مہدی زود برو دہ محلہ اماد۔ اونا مینگرنہ کہ بابے رضا دیوالِ خانے خو تقریبن شش فٹ دہ مینے محلہ پیش کدہ بود و قد رشتہ دارای خو مستری رہ گوررس کومک کدہ رئي بود تا دیوال زودتر بال بورہ۔
مہدی طرف خوندے خانہ رافت و پرسان کد “بابے رضا چیز کار کدہ رئيی؟” 
“کم اَولی خو پیش کدہ رئیوم،” اونا دہ قراری جواب دد۔ 
“شمو فکر نمونین کہ قد ازی کار از شمو محلہ تنگ موشنہ و امدو رفتو مشکل موشنہ؟” مہدی پرسان کد۔ 
“نہ اید کار نموشہ،” اونا دوبارہ دہ قراری جواب دد۔ 
“اگر شمو اَولی خو پیش کنین صوبا دہ اینجی رکشہ یا گاڈی ام امدہ نمیتنہ،” مہدی دوبارہ گوفت۔ 
“ولہ ما خو اَولی خو پیش مونوم – رکشہ مایہ یا نہ – ما کار ندروم،” اونا کم دہ قار گوفت۔ 
“شمو از میونسپلٹی اجازت گریفتین؟” مہدی دوبارہ پرسان کد۔
“ما اجازہ دہ کار ندروم،” اونا دہ قراری جواب دد۔
“بورو! ہر کار مونی کنو،” مامای شی دہ کومکِ رشتہ دار خو اماد و دہ حقارت گوفت۔
مہدی عمر شی زیاد نبود او زمان تقریبن دہ عمرای اژدہ سالہ بود ازو خاطر اونا رہ قصت نکد۔ مہدی حیران بود کہ اونا چیز کار کنہ؟ دہ کجا بورہ؟ دیوالِ اَولی ازونا رہ چتور روک کنہ؟
یگ نفر دہ پہلوی ازونا ایستہ بود اونا مشورہ دد کہ اونا فورن ہمسایا رہ خبر کنہ۔ مہدی زود طرف خانے ہمسایہ رافت۔ دروازای ازونا رہ ٹخ ٹخ کدہ اونا رہ گوفت۔ چند ہمسایہ قد ازونا اماد و قد بابے رضا گپ زدو شروع کد مگر ایتر معلوم موشود کہ خوندے خانہ ہمسایا رہ ام قصت نموکد۔ مہدی ہمسایا رہ مشورہ دد کہ اونا قد خوندے خانہ گپ زدو رہ جاری بیلہ تاکہ اونا پولیس رہ بیارہ۔

مہدی زود طرف خانہ ڈبل کد۔ سائیکل رہ گرفتہ زودتر طرف پولیس اسٹیشن پیڈل زدو شروع کد۔ از بلے علمدار روڈ سائیکل رہ دیستِ راس کیل کدہ درونِ پولیس اسٹیشن داخل شود۔ سائیکل رہ تای درخت ایستہ کد مگر یک پولیس ام دیدہ نموشود۔ کم پیش رفتہ طرفِ دفترِ ایس ایچ او رافت۔ اونا نبود۔ طرفِ دفترِ محرر رافت اونا ام نبود۔ مہدی حیران بودوم کہ آلی چیز کار کنہ۔ دہ حیرانگی تای برانڈہ ایستہ شود۔ فکر کدہ رئي بود کہ یگو دو سہ منٹ بعد مینگرنہ کہ یگ پولوس طرف ازونا اماد و پرسان کد “کیا بات ہے؟”
مہدی تمام قصہ رہ گوفت و ازونا درخواست کد کہ اونا زود قد ازونا بورہ تا دیوال بابے رضا رہ روک کنہ مگر اونا گوفت، “اس وقت تھانے میں کوئ نہیں ہے تمام پولیس اس وقت مختلف پولنگ اسٹیشنوں کے گشت پر ہیں۔” 
“پلیس، آپ کچھ کر لیں ورنہ وہ سرکاری آفیسر غیر قانونی دیوار مکمل کر لیگا،” مہدی دوبارہ ریکویسٹ کد۔ 
“وہ کون ہے اور کس دفتر میں کام کرتا ہے؟” پولوس دہ حیرانگی پرسان کد۔
مہدی اونا رہ تمام تفصیل شی دد۔ پولوس کم فکر کد۔ بعد ازو گوفت “ایک ایس آئ (سب انسپکٹر) ہے مگر وہ اس وقت کمرے میں سو رہا ہے۔ میں ابھی اس سے بات کرتا ہوں اگر وہ جانے کیلئے تیار ہوا تو آپ کے ساتھ جاۓ گا۔”
“بہت شکریہ جناب،” مہدی گوفت۔ 
پولوس صاحب رافت۔ بعد از چند منٹ قد یک دیگہ پولوس بخیالم کہ ایس آئ بود چمای خو ملیدہ اماد۔ مہدی زود طرف ازونا رافت۔ اونا رہ سلام کدہ تعارف خو کد و تمام قصہ رہ گوفت۔ خدائشی اونا خوب پولوس بود۔ رحم دل بود۔ طرف مہدی توخ کدہ گوفت، “چلو میرے ساتھ!” 
بعد ازو، ہر دوی ازونا مینے سوزوکی پولوس شیشت۔ طرف محلہ رئي شود۔ دانِ راہ اونا خوندے اولی رہ کلو ملامت کد کہ اونا غیر قانونی کار کدہ رئيہ۔
غئیدیکہ مہدی ہمرای پولوس دہ محلہ رسید بابے رضا دیوالِ خانے خو تقریبن دو فٹ بال کدہ بود۔ پولوس قد بابے رضا گپ زد۔ اونا رہ کار شی روک کد۔ دیوال شی چپہ کد و حکم دد کہ فورن رای گلی رہ صاف کنہ۔ مہدی اید یقین شی نمیماد کہ چتور زود ای کار شود۔ بعد ازو اونا دوبارہ ہمرای پولوس مینے سوزوکی شیشت تا از پولوس اسٹیشن سائیکل خو واپس بیگرہ۔ پولوس قد مہدی دوبارہ طرف پولوس اسٹیشن رئي شود۔ 
“جناب، آپکا بہت شکریہ،” مہدی گوفت۔ “اگر آج آپ نہ ہوتے تو وہ یہ دیوار ضرور بنا لیتا۔”
“ایسی کوئ بات نہیں شہری کی خدمت کرنا ہمارا فرض ہے،” پولوس گفت و دوبارہ گوفت “ آپ کو معلوم ہے کہ میں سو رہا تھا اور آپ کے کام کی وجہ سے مجھے نیند سے جگایا گیا۔ میں نے ناشتہ بھی نہیں کیا ہے۔ اگر آپ مجھے کہیں ناشتہ کرا دیں تو آپکا شکریہ۔”
مہدی اوّل نفامید کہ پولوس چیز گوفتہ رئیہ مگر اونا زود فامید کہ مطلب ازونا چیز استہ۔ اونا دیستای خو مینے جیب خو کد۔ دہ جیب شی دہ روپیہ بود۔ طرف ازونا بوردہ گوفت، “بخدا قسم اور نہیں ہے اگر ہوتا تو میں ضرور دے دیتا۔” 
پولوس طرف دہ روپیہ بد بد توخ کد “ ٹھیک ہے کوئ بات نہیں،” گوفتہ پیسہ رہ دہ جیب خو اندخت۔” 
سوزوکی وقتیکہ دہ تھانہ رسید روک شود۔ مہدی دوبارہ شکریے پولوس رہ ادا کد و بعد ازو سائیکل خو گرفتہ زود واپس طرفِ مری آباد پیڈل زدو شروع کد۔

محمد یونس

یونس دہ کاڈیف، يوکے زندگی مونہ و دہ کالج انگلیسی درس میدیہ۔ اونا آزرگی زبان رہ خوش درہ و بیشتر دہ آزرگی زبان نوشتہ مونہ۔
Please click below to read more stories in Hazaragi language www.myounas.com
محمد یونس

محمد یونس

یونس دہ کاڈیف، يوکے زندگی مونہ و دہ کالج انگلیسی درس میدیہ۔ اونا آزرگی زبان رہ خوش درہ و بیشتر دہ آزرگی زبان نوشتہ مونہ۔ Please click below to read more stories in Hazaragi language www.myounas.com

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *