غزل ہزارہ گی ۔۔۔ شوکت شعور

غزل ہزارہ گی
شوکت شعور
تاشہ موشوم تای چادر تو آبئی
ما خو استوم ریزہ دوختر تو آبئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قاشیم سیا چیم مہ سورمہ نہ کنو
ما نموروم سر مہ شانہ نہ کنو
توی نہ مونہ بندی جیگر تو آبئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آبئی دیستای مرہ خینہ نہ کنو
مرہ از خود خو تو جودا نہ کنو
نوری دیدے تو یوم چاگر تو آبئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خیشم کدوم از دیل خو نموروم ما
ازی خانہ آغیل خو نموروم ما
ما نموروم قسم دہ سر تو آبئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شعور